National Assembly 139

اپوزیشن کو بڑا جھٹکا، تحریک عدم اعتماد مسترد، صدر نے قومی اسمبلی تحلیل کر دی

حکومت نے اپوزیشن پر بجلیاں گرا دیں۔ ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم سوری کی جانب سے تحریک عدم اعتماد کی مستردگی کے بعد وزیراعظم کی ایڈوائس پر صدر مملکت عارف علوی نے قومی اسمبلی تحلیل کر دی۔

ڈپٹی اسپیکر کی زیرصدارت قومی اسمبلی کے اجلاس میں وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا کہ تحریک عدم اعتماد آئین کے آرٹیکل 95 کے تحت پیش کی جاتی ہے۔ ہمارے سفیر کو 7 مارچ کو کہا گیا کہ وزیراعظم کیخلاف عدم اعتماد لائی جارہی ہے۔ اگر تحریک کامیاب ہوتی ہے تو آپ کو معاف کر دیا جائے گا۔

فواد چودھری نے کہا کہ آرٹیکل 5 اے کے تحت ریاست سے وفاداری ہر شہری کا فرض ہے۔ بیرون ملک کی مدد سے پاکستان میں حکومت اور رجیم کی تبدیلی آئین کے آرٹیکل 5 کی خلاف ورزی ہے۔ کیا ہم پاکستانی غلام، فقیر یا کٹھ پتلی ہیں؟ ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری نے رولنگ دیتے ہوئے کہا کہ تحریک عدم اعتماد رولز کی خلاف ورزی ہے، لہذا وزیراعظم کے خلاف قرارداد مسترد کی جاتی ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے قوم سے خطاب کرتے ہوئے ساری قوم کو مبارکباد دی اور کہا کہ اسپیکر قومی اسمبلی نے رجیم تبدیل کرنے کی تحریک مسترد کردی۔
انہوں نے کہا کہ ملک کے ساتھ غداری ہورہی تھی اور پوری قوم پریشان تھی۔ سب کو یہی پیغام دیا کہ گھبرانا نہیں ہے۔ ایسی سازش قوم کامیاب نہیں ہونے دیگی۔ صدر مملکت کو اسمبلیاں تحلیل کرنے کی تجویز بھیج دی ہے۔ کسی بیرونی قوت نے ملک کے مستقبل کا فیصلہ نہیں کرنا۔ اپوزیشن کو کہتا ہوں کہ ارکان اسمبلی خریدنے کی بجائے غریبوں کا بھلا کر دیں، ملک کے مستقبل کا فیصلہ عوام نے کرنا ہے، قوم نئے انتخابات کی تیاری کرے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں